موٹروے کیس میں تیسرا نام بھی سامنے آگیا

موٹروے خاتون ریپ کیس میں تیسرا نام بھی سامنے آگیا، مبینہ ملزم بالا مستری ڈکیتی کی منصوبہ بندی میں شامل رہا۔

موٹر وے زیادتی کیس میں گرفتار ملزم شفقت علی نے کئی اہم انکشافات کیے ہیں۔

اعتراف جرم کرنے والے شفقت علی نے پولیس کو بتایا کہ واردات کے لیے عابد علی نے مجھے اور بالا مستری کو لاہور بلایا۔

ملزم نے مزید کہا کہ شاہدرہ میں ہم تینوں نے اکٹھے ہو کر دہی بڑے کھائے اور پھر واردات کے لیے نکلے لیکن بالا مستری راستے سے واپس چلا گیا۔

شفقت علی نے یہ بھی کہا کہ موٹروے پر واردات کے دوران پولیس کے موقع پر پہنچ جانے پر زیادتی کیے بغیر ہی فرار ہوگئے۔

انہوں نے کہا کہ موٹروے پر خاتون سے زیادتی کے بعد ایک رات قلعہ ستار شاہ میں قیام کیا اور اگلے روز میں دیپالپور اور عابد مانگا منڈی میں اپنے باپ کے پاس چلا گیا۔

اعترافی ملزم نے پولیس کو بتایا کہ مرکزی ملزم عابد علی سے آخری بار 3 دن پہلے رابطہ ہوا۔

دوران تفتیش شفقت علی نے بھی بتایا کہ میں نے عابد علی کے ہمراہ ایک ماہ پہلے بھی شیخوپورہ میں دوران ڈکیتی خاتون سے زیادتی کی کوشش کی تھی۔

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے